پارٹی میں لوگ جہانگیر ترین کے لیے نہیں عمران خان کے لیے آئے تھے، زلفی بخاری

اسلام آباد: معاون خصوصی ذوالفقار بخاری نے کہا ہے کہ 2018 کے انتخابات کے بعد حکومت سازی کے لیے لوگ پارٹی میں عمران خان کیلئے آئے تھے، جہانگیر ترین یا زلفی بخاری کے لیے نہیں۔

جہانگیر ترین کا وزیراعظم کے ساتھ بڑا گہرا اور پرانا تعلق ہے، وہ وزیراعظم عمران خان کے خلاف محاذ آرائی کا ارادہ نہیں رکھتے۔ غیر ملکی میڈیا ادارے کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ جہانگیر ترین نے پی ٹی آئی کے لیے بہت کام کیے ہیں اور 2018 کے انتخابات کے بعد حکومت
سازی کے لیے کچھ لوگوں کو وہ ہی لے کر آئے لیکن وہ لوگ پارٹی میں عمران خان کے لیے آئے تھے، جہانگیر ترین یا زلفی بخاری کے لیے نہیں۔

انہوں نے کہا کہ جہانگیر ترین وزیر اعظم عمران خان کے کافی قریب تھے اس لیے یہ کردار انہیں ملا اور ان کے ذریعے لوگوں نے پی ٹی آئی کی حکومت سازی میں مدد کی ۔زلفی بخاری کا کہنا تھا کہ جہانگیر ترین پارٹی کے سینئر اور اہم رہنما ہیں، ان کا وزیر اعظم کے ساتھ بڑا گہرا اور پرانا تعلق ہے۔ چینی اور آٹے بحران کی تحقیقات کا نتیجہ خواہ کچھ بھی آئے، میرے علم میں کم از کم ایسا کچھ بھی نہیں کہ و ہ پارٹی کے خلاف ہیں۔ اس میں کوئی سچائی نہیں ہے کہ وہ اپنی پارٹی بنانے کی کوشش کر رہے ہیں، انھوں نے پہلے بھی پی ٹی آئی کی خدمت کی ہے اور یقین ہے کہ آئندہ بھی کرتے رہیں گے۔