انگریز کی پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور کو گالیاں، پاکستانی کے رویے نے دل جیت لیے

برطانیہ: برطانیہ میں ایک انگریز نے پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور کو نسل پرستی کا نشانہ بناتے ہوئے گالیاں دیں۔ پاکستانی نے ٹیکسی میں لگے کیمرے میں ریکارڈنگ کر کے ویڈیو سوشل میڈیا پر ڈال دی۔

امریکہ کے بعد اب برطانیہ میں بھی مسلمانوں کو نسل پرستی کا نشانہ بنایا جانے لگا جس کا ثبوت حال ہی میں وائرل ہونے والی ویڈیو ہے۔یہ ویڈیو ایک پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور نے گاڑی میں لگے کیمرے سے بنائی، جس میں ایک انگریز مسافر ڈرائیور کا مسلمان اور پاکستانی ہونے پر گالیاں دے رہا ہے۔

نسل پرستی کے شکار انگریز کا پاکستانی کو کہنا تھا کہ تم لوگ خود کو کیا سمجھتے ہو کیا تم لوگ کوئی خاص ہو؟ مجھے کوئی حیرت نہیں کہ بھارتی پاکسانیوں پر بم برساتے ہیں، تم لوگ کبھی بھی یہ جنگ نہیں جیتو گے۔

انگریز کا پاکستانی کو کہنا تھا کہ یہ انگلینڈ ہے اور تم خوش قسمت ہو جو یہاں کام کر رہے ہو، اس سارے معاملے پر پاکستانی ڈرائیور نے اچھے اخلاق کا مظاہرہ کرتے ہوئے انگریز سے کہا کہ آپ میرا کرایہ دیں اور گاڑی سے اتریں۔

پاکستانی نے کہا کہ ہم یہاں مقابلہ کرنے نہیں آئے، میں یہ ویڈیو سوشل میڈیا پر ڈالوں گا تا کہ زیادہ سے زیادہ لوگ آپ کا چہرہ دیکھ سکیں۔ لیکن انگریز نے پاکستانی کی باتوں کو نظر انداز کرتے ہوئے مسلمانوں اور پاکستانیوں کے خلاف گندی زبان کا سلسلہ جاری رکھا۔

یہ بھی پڑھیں: ہم وہ قوم ہیں جو کورونا کو ڈرامہ جبکہ ارتغرل کو حقیقت سمجھتے ہیں، فیصل قریشی

اس معاملے پر اینکر پرسن اقرارالحسن نے ٹویٹ کوتے ہوئے کہا کہ پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور کے صبر کو دیکھیے، اس نے بنا لڑے ہی یہ لڑائی جیت لی۔