لاک ڈاؤن کی وجہ سے گھریلو جھگڑے، 3 ہزار سے زائد خواتین نے طلاق کے لیے عدالت سے رجوع کر لیا

اسلام آباد : لاک ڈاؤن کے دوران میاں بیوی کے جھگڑوں میں اضافہ ہوا ہے، صرف پنجاب میں 3ہزار سے زائد خواتین طلاق کیلئے عدالت پہنچ گئیں۔

تفصیلات کے مطابق دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی کورونا کے پھیلاؤ کوروکنے کیلئے لاک ڈاؤن کیا گیا تھا ، جس کی وجہ سے سب سے زیادہ دہاڑی دار طبقہ متاثر ہوا ۔ معاشی مسائل پیداہو جانے کے باعث میاں بیوی کے درمیاں گھریلو مسائل میں اضافہ ہو گیا ہے۔

ایسی صورتحال کے باعث گھر کی ذمہ داریاں پوری نہ ہونا میاں بیوی کے درمیان جھگڑوں کی بڑی وجہ بنا ۔ جس کے بعد پنجاب کے 36 اضلاع میں فیملی کورٹ میں ، خلع ، سامان جہیز اورخرچہ نان نفقہ کے 3 ہزار 240 دعوے دائر کر دیئے گئے ہیں۔ دعوے دائر کرنے والی زیادہ تر خواتین نے کہا ہے کہ شوہر خرچہ پورا نہیں کرتا اور بات بات پر لڑتا ہے

یہ بھی پڑھیں: سعودی عرب میں کوڑے مارنے کی سزا کو ختم کر دیا گیا

قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ خواتین کو اس صورتحال میں صبر سے کام لینا چاہیے۔لاک ڈاؤن کے باعث پوری دنیا کو مشکلات کا سامنا ہے۔ مالی مسائل سے شروع ہونے والی لڑائیاں عدالتوں تک نہیں پہنچنی چاہییں